Hide Button

سیمی ٹِپٹ منشٹریز مندرجہ ذیل زبانوں میں مواد مہیا کرتی ہے:۔

English  |  中文  |  فارسی(Farsi)  |  हिन्दी(Hindi)

Português  |  ਪੰਜਾਬੀ(Punjabi)  |  Român

Русский  |  Español  |  தமிழ்(Tamil)  |  اردو(Urdu)

news

مشرقِ وُسطیٰ میں شاگرد بنانا

سیمی ٹپٹ اور بیری سینٹ کلیئر باہم اکٹھے ہوئے تاکہ مشرقِ وُسطیٰ میں نوجوانوں کو تربیت دیں تاکہ وُہ دو مختلف ممالک کے نوجوان تک رسائی کر کے اُنہیں شاگرد بنا سکیں۔ یہ پروگرام کسی خاص لائحہ عمل کے تحت تھے کیونکہ اِن ممالک میں سے ایک ملک کے نوجوانوں میں بہت بڑی بیداری آ رہی ہے۔

اِن ممالک میں ماضی میں ٹپٹ نے کئی خادم تیار کیئے ہیں لیکن یہ پہلی مرتبہ تھی کہ نوجوانوں کو خصوصی موقع دیا گیا۔بیری سینٹ کلیئر کیلئے جو کہ Reach Out Ministriesکے بانی ہیں پہلا موقع تھا کہ سیمی کیساتھ مِل کر کام کریں۔ کلیئر نے ساری دُنیا میں جا کر نوجوان خادموں کو تربیت دی۔

سیمی اور کلیئر دونوں نے ہفتہ بھر شاگردیت کے اُصول اور قیادت کے بارے میں سِکھایا۔ سینٹ کلیئر نے جب اَپنے تربیتی مواد‘‘یسوع کی نوجوانوں میں خدمت کی اہمیت’’ سے نوجوانوں کو سکھایا تو نوجوانوں نے بڑی خوشی سے اُسے قبول کیا۔ٹپٹ نےبھی شاگردیت کے اُصول سِکھائے اور قائدین کو بتایا کہ ‘‘میں سمجھتا ہوں کہ خُدا آپ کے ممالک میں بڑی بیداری بھیجنے کو ہے۔ خُدا نوجوانوں میں رُوح القدس کی نئے مے اُنڈیلنا چاہتاہے۔ لیکن اِس نئ مے کیلئے نئی مشکوں کی ضرورت ہے۔میں سمجھتا ہوں کہ شاگردیت میں نوجوان ہی وُہ نئے مشکیزے ہیں’’۔

سکھائے جانے کے اِس عمل میں اتنا زیادہ خوشی کا اِظہار ہوا کہ یہ تعلیم وقت کی اہم ضرورت تھی۔ بہت سارے لوگوں نے کہا کہ‘‘میں یہاں پر نوجوانوں تک رسائی کرنے کیلئےخاص بوجھ اور خواہش لے کر آیا تھا لیکن جانتا نہیں تھا کہ کیا کروں۔اَب میرے پاس منصوبہ ہے جس کا میں اطلاق کر سکتاہوں’’۔

Praying نوجوانوں میں کام کرنے والے خادموں کیساتھ بہت زیادہ وقت گزارنے کا اتفاق ہوا۔ بہت سے یہ چاہتے تھے کہ خُدا اُن کی زندگی میں بیداری بھیجے اور خُدا سے مدد مانگتے تھے کہ وُہ نئی خدمات کو دُعا پر قائم کرنے والے ہوں۔اُنہوں نے اَپنی ٹیم کیساتھ وقت گُزارا تاکہ جب وُہ اَپنے ملک میں خدمت کیلئے واپس جاتے ہیں تو وہاں جا کر اِن باتوں کو عملی جامہ کیسے پہنائیں گے۔

نوجوانوں کے کئی رہنمائوں نے یہ بیان دیا کہ اُنہوں نے اِس طرح کی تربیت کبھی نہیں پائی کہ اِس قدر سادہ اور واضح طریقے سے گواہی دے سکتے۔تاہم دورانِ درس و تدریس اُنہوں نے ایسا کر نے کی مشق کی اور پروگرام بنایا کہ اَپنی گواہی کےذریعہ سے وُہ خوشخبری سُنائیں گے اور اَپنے نوجوانوں کو ایسا ہی کرنے کیلئے تربیت دیں گے۔کانفرنس کے منتظمین نے کہا کہ ہم نے جتنی بھی کانفرنسیں کیں یہ اُن میں سے سب سے بہترین کانفرنس تھی۔یہ نوجوانوں میں کام کرنے والے خادم تیار تھے کہ وُہ اَپنے اَپنے ملک میں جا کر نسل نو میں شاگرد بنانے کے عمل کا آغاز کریں گے۔

شاگردیت و بیداری ۔۔۔۔۔ایک ٹیم بنانا

سیمی ٹپٹ اور بیری سینٹ کلیئر دورانِ تربیت ایک دُوسرے کی تعریف کرتے رہے۔سینٹ کلیئرنوجوانوں کو یہ تعلیم دے رہے تھے کہ پہلے اُوپر رسائی کریں اور پھر دُوسروں تک رسائی کریں’’ تو ٹپٹ نوجوانوں کودُعا کے اُصولوں، بیداری اور پاکیزگی کی تعلیم دے رہے تھے تاکہ نوجوان اِس لائق ہو سکیں کہ وُہ اُوپر تک اور دُوسروں تک رسائی کر سکیں۔

وُہ جنہوں نے اِس کانفرنس میں شراکت کی اُنہوں نے اِس بات کا اظہار کیا کہ سکھانے والے دونوں اساتذہ نے اَپنے تدریسی سلسلے میں ایسا توازن رکھا کہ کس طرح سے نوجوانوں میں موثر طریقے سے کام کیا جا سکتاہے۔دونوں تعلیمات ایک دُوسرے کی طرف سے تعریف پر مبنی تھیں۔سینٹ کلیئر نے ہر سیشن کے اختتام پر نوجوانوں کو حوصلہ دیا کہ ٹیم بنانے میں وقت گُزاریں۔اُن کو مثال دی گئی تھی کہ جیسے وُہ اور سیمی ٹیم کے طور پر ہر سیشن میں ذمہ داریوں کو ایک دُوسرے سے بانٹ کر پیش کرتے ہیں۔ ٹپٹ نے ایک شام اُس ملک کے بڑے شہر میں ایک آرتھوڈکس کلیسیا میں بیداری کے مضمون پر پیغام دیا۔عبادت

کے اختتام پر انتہائی خوشی کا اظہار کیا گیا۔

Special Prayerبے شمار لوگوں نے مسیح کیساتھ عہد باندھا اور کہا کہ اُنہوں نے کیسا منصوبہ بنایا کہ وُہ خُدا کو موقع دیں کہ وُہ اُنہیں اور زیادہ مسیح جیسا بنائے۔

ٹپٹ نے کہا‘‘میں یقین رکھتا ہوں کہ خُدا نوجوانوں کی ایک ایسی پُشت کھڑی کر رہا ہے جن کا دِل خُدا کا مقبولِ نظر ہو ۔ہم نوجوان لوگوں کی اس طرح سے مدد کریں کہ وُہ جان سکیں کہ کیسے خُداوند کی پیروی کرنا ہے اور وُہ اس لائق ہو سکیں کہ وُہ اپنے اَقربا کو خوشخبری سُنا سکیں۔ضروری ہے کہ ہم اَپنی خدمت کو اور زیادہ بڑھانے والے ہوں۔میں انتہائی خوش ہو ں کیونکہ ہماری کانفرنس میں ایسا ہوا’’۔