Hide Button

سیمی ٹِپٹ منشٹریز مندرجہ ذیل زبانوں میں مواد مہیا کرتی ہے:۔

English  |  中文  |  فارسی(Farsi)  |  हिन्दी(Hindi)

Português  |  ਪੰਜਾਬੀ(Punjabi)  |  Român

Русский  |  Español  |  தமிழ்(Tamil)  |  اردو(Urdu)

devotions
شفاعت کُنندگان ۔۔آسمان کے چِھپے ہیرو

یہ ایک تاریخی موقع تھا۔بیلٹکی میں ہزاروں لوگ جمع تھے۔مولدووا کے ایک فُٹ بال گراﺅنڈ میں پہلی دفعہ خوشخبری سُنائی جارہی تھی۔اُس وقت تک مولدووا قدیم روس کا ہی حصّہ تھا۔مسیحیوں کو ستا یا جا رہا تھا۔زندگی اجیرن ہو گئی تھی۔سب لوگوں کے ذہن دہریت کی تعلیم سے بھر دیئے گئے تھے۔لیکن مسیحی خدا سے دُعا کرتے تھے کہ وہ اُن کیلئے دروازے کھولے اور آج کے دِن خُدا نے ایسا کر دیا تھا۔

جب میں کلام سُنانے کیلئے کھڑا ہوا تو میں بھی کافی دباﺅ کا شکار تھا۔سوالات سے میرا ذہن بھرگیا تھا کہ لوگ کیا سوچیں گے؟جب میں کلام سُنانے کے بعد اپیل کرونگا تو کیا لوگ توبہ کریں گے اور مسیح پر ایمان لائینگے؟کئی سال پہلے جب میں روس کی ایک یونیورسٹی کے طلباءکو خوشخبری سُنا رہا تھا تو مجھے وہاں سے نِکال دیا گیا تھا اور اب میں اس تاریخی لمے میں کھڑا ہوں تاکہ خدا کی طرف سے نجات کی عظیم بخشش پر بات کروں۔

بعد از دوپہرجب میں اپنے پیغام کے اِختتام پر تھا تو لوگوں کو اپیل کی کہ وہ مسیح پر ایمان لائیں۔پہلے تو میں نے لوگوں سے کہا کہ اگر وہ مسیح کے جاننا چاہتے ہیں تو وہ اپنے ہاتھ اُٹھائیں تاکہ میں اُن کیلئے دُعا کروں۔کسی نے ایک ہاتھ بھی نہیں اُٹھایا۔چنانچہ میں نے دُعا کی«اے خُدا اب میں کیا کروں؟»یوں لگا کہ جیسے رُوح القدس میں کان میں کُچھ کہہ رہا ہے کہ«دعوت دیتے رہو، دعوت دیتے رہو»۔

تب میں نے کہا جو لوگ مسیح پر ایمان لا کر اُس کی پیروی میں ہو لینا چاہتے ہیں وہ اسٹیج کے سامنے آ جائیں۔کوئی اپنی جگہ سے ہِلا بھی نہیں۔ میں نے پھر دُعا کی تو یوں لگتا تھا کہ جیسے خُدا یہ کہہ رہا ہے کہ میں نے سب کُچھ اپنے کنٹرول میں کیا ہوا ہے۔میں نے آنکھیں کھولیں تو دیکھ کر حیران ہو گیا کہ ایک ضعیف اور بیمار خاتوں بذاتِ خود چل کر سامنے آئی۔وہ اپنے سر پر پھولوں کا ایک گُلدستہ اُٹھائے تھی۔وہ اسٹیڈیم میں موجودتمام لوگوں سے اکیلی ہی اسٹیج کے سامنے آئی۔اُس نے وہ گُلدستہ مجھے دیا اور پُلپٹ کے سامنے گھٹنے ٹیکے اور خُدا کے حضور دُعا کرنا اور اشک بہانا شروع ہو گئی۔

جب وہ دُعا کرنے لگی تو میں نے آنکھیں اُٹھا کر دیکھا کہ دس بیس، پچاس اور پھرسینکڑوں نے یسوع مسیح کی خوشخبری سُن کر رَدِّ عمل کا اظہار کیا۔یہ ایک ایسا نظارہ تھا کہ جس کو دیکھ کر عقل دنگ رہ جاتی تھی۔اُس دوپہر تقریباً 2500کے قریب لوگوں نے اپنے دِل خُدا وند یسوع مسیح کو دیئے۔

اُس ایک ضعیفف خاتون کی وجہ سے مجھے اتنا حوصلہ مِلا کہ وہاں جو کُچھ ہوا اُس سے متعلق میں نے اپنے خبر نامے میں کہانی لکھی۔جو کُچھ وہاں پر ہوا اُس کی تصاویر بھی ہمارے پاس ہیں۔ہمارے خبر نامے کے نِکلے ابھی زیادہ دیر نہیں ہوئی تھی کہ مجھے ایک خاتون نے فون کیا جو میری بیوی کے ساتھ دُعائیہ میٹنگ میں شمولیت کیا کرتی تھی۔اُس نے کہا«سیمی! کیا میں آپ کے دفتر آ سکتی ہوں؟میرے پاس کوئی چیز ہے جو میں آپ کو دِکھانا چاہتی ہوں»۔

وہ فوراً میرے دفتر آئی اور اپنے ساتھ اپنی دُعائیہ ڈائری بھی لائی۔ہر روز کا وہ ریکارڈ رکھتی تھی کہ خدا کے اُسے کیسے دُعا کرنے کا بوجھ دیا۔وہ ہمارے کروسیڈ کیلئے جو مالدووا میں ہونا تھا دو ماہ سے دُعا کر رہی تھی۔خُدا نے اُس کے دِل میں بوجھ ڈالا کہ وہ مالدووا کی ایک انتہائی ضعیف خاتون کیلئے دُعا کرے تاکہ«وہ خاتون وہ کر سکے جو خُدا نے اُس کے دِل میں ڈالا ہے کہ وہ کرے»۔جب وہ دُعا کرتی تھی وتو اُس نے اس بات کو مسلسل اپنی ڈائری میں تحریر کیا۔

میںخوشی سے بھر گیا۔سین اینٹونیو ٹیکساس میں ایک خاتون دُعا کرتی ہے اوراُس کے نتیجہ میں خدا ایک مُلک کو ہِلا دیتا ہے۔دُعا نے اس غریب عورت کے دِل کو تیار کیا جس کی وجہ سے خدا ایک معجزہ کرنے کیلئے تیار ہو گیا۔میں سمجھتا ہوں کہ جب ہم آسمان پر جائینگے تو ہم دیکھیں گے کہ ضروری نہیں کہ اصل ہیرو وہی شخصیات ہوں جو بڑے بڑے اسٹیجز سے بولتے ہیں۔ضروری نہیں کہ وہ لوگوں میں بڑے جانے پہچانے لوگ ہوں لیکن اس میںکوئی شک نہیں کہ وہ خُدا کے بڑے جانے پہچانے لوگ ہوں گے یعنی وہ جو خداوند کے حضور انتہائی خاموشی میں ٹھہرے رہتے ہیں۔

یسوع نے کہا«بلکہ جب تُو دُعا کرے تو اپنی کوٹھڑی میں جا اور دروازہ بند کر کے اپنے باپ سے جو پوشیدگی میں ہے دُعا کر۔اِس صورت میں تیرا باپ جو پوشیدگی میں دیکھتا ہے تجھے بدلہ دیگا»(متی ۶: ۶)۔ایک دِن ہم سب کو معلوم ہو جائیگا کہ خدا کے چھپے ہوئے ہیروز کون ہیں۔یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے اکیلے میں اپنی پوشیدہ دُعاﺅں کے ذریعے خُدا کی بادشاہت کو وُسعت دینے کیلئے تاریخ رقم کی ہے۔